دشمنوں نے جو دشمنی کی ہے۔ یاسر شیرازی

دشمنوں نے جو دشمنی کی ہے

دوستوں نے بھی کیا کمی کی ہے

خامشی پر ہیں لوگ زیر عتاب

اور ہم نے تو بات بھی کی ہے

مطمئن ہے ضمیر تو اپنا

بات ساری ضمیر ہی کی ہے

اپنی تو داستاں ہے بس اتنی

غم اٹھائے ہیں شاعری کی ہے

اب نظر میں نہیں ہے ایک ہی پھول

فکر ہم کو کلی کلی کی ہے

پا سکیں گے نہ عمر بھر جس کو

جستجو آج بھی اسی کی ہے

جب مہ و مہر بجھ گئے جالبؔ

ہم نے اشکوں سے روشنی کی ہے

حبیب جالب ۔ پیشکش یاسر شیرازی