اپنا خاکہ لگتا ہوں ایک تماشا لگتا ہوں۔جون ایلیا

اپنا خاکہ لگتا ہوں

ایک تماشا لگتا ہوں

آئینوں کو زنگ لگا

اب میں کیسا لگتا ہوں

اب میں کوئی شخص نہیں

اس کا سایا لگتا ہوں

سارے رشتے تشنہ ہیں

کیا میں دریا لگتا ہوں

اس سے گلے مل کر خود کو

تنہا تنہا لگتا ہوں

خود کو میں سب آنکھوں میں

دھندلا دھندلا لگتا ہوں

میں ہر لمحہ اس گھر سے

جانے والا لگتا ہوں

کیا ہوئے وہ سب لوگ کہ میں

سونا سونا لگتا ہوں

مصلحت اس میں کیا ہے میری

ٹوٹا پھوٹا لگتا ہوں

کیا تم کو اس حال میں بھی

میں دنیا کا لگتا ہوں

کب کا روگی ہوں ویسے

شہر مسیحا لگتا ہوں

میرا تالو تر کر دو

سچ مچ پیاسا لگتا ہوں

مجھ سے کما لو کچھ پیسے

زندہ مردہ لگتا ہوں

میں نے سہے ہیں مکر اپنے

اب بیچارہ لگتا ہوں
جون ایلیا

اس خبر پر بحث کرنے کے لئے ابھی ہمارے پورٹل پر فری رجسٹر کریں۔

زمرے