اسے منا کر غرور اس کا بڑھا نہ دینا۔ قتیل شفائی

اسے منا کر غرور اس کا بڑھا نہ دینا 
وہ سامنے آئے بھی تو اس کو صدا نہ دینا 

خلوص کو جو خوشامدوں میں شمار کر لیں 
تم ایسے لوگوں کو تحفتاً بھی وفا نہ دینا 

وہ جس کی ٹھوکر میں ہو سنبھلنے کا درس شامل 
تم ایسے پتھر کو راستے سے ہٹا نہ دینا 

سزا گناہوں کی دینا اس کو ضرور لیکن 
وہ آدمی ہے تم اس کی عظمت گھٹا نہ دینا 

جہاں رفاقت ہو فتنہ پرداز مولوی کی 
بہشت ایسی کسی کو میرے خدا نہ دینا 

قتیلؔ مجھ کو یہی سکھایا مرے نبیؐ نے 
کہ فتح پا کر بھی دشمنوں کو سزا نہ دینا
قتیل شفایی

اس خبر پر بحث کرنے کے لئے ابھی ہمارے پورٹل پر فری رجسٹر کریں۔

زمرے