انا اور دلچسپ حقاٸق

اکثر جب کم عمری میں انسان کو کامیابی ملتی ہے تو اس کے پاٶں زمین پر نہیں ٹکتے. شیطان اسے سمجھاتا ہے یہ سب تیرا کمال ہے. یوں خود اعتمادی غرور میں تبدیل ہونے لگتی ہے. برا وقت شروع. ہر انسان زندگی میں ان تین مراحل میں سے کسی ایک پر ہوتا ہے.

آرزو مند یا متاثر، کامیاب، ناکام.

غمنڈ یا غرور کسی کے دل میں گھر کرتا ہے. تو آدمی کے ہدف سے اس کی نظر ہٹ جاتی ہے اور عارضی تسلی کے جال میں پھنس جاتا ہے. تینوں مرحلوں میں غرور اور غمنڈ ہم پر اثر انداز ہونے کی کوشش کرتا ہے لیکن دوسرے مرحلے یعنی کامیابی پر زیادہ خطرہ ہوتا ہے. اگر ہم غمنڈ یا غرور کے شکار ہو جاتے ہیں تو ہم سمجتے ہیں کہ ہم ہی ہم ہیں صرف. اکثر لوگ اپنے اندر کے فرعون کو مار نہیں پا رہے ہوتے بلکہ یہ ہمیں اچھا لگنے لگتا ہے. انا شیراب اور افیون سے زیادہ نقصان کرتی ہے. غمنڈ کا جال محسوس نہیں ہونے دیتا کہ انسان نقصان کی طرف جانے والا ہے. جب کام خراب ہونے لگتے ہیں تو ہم اپنے لاٸحہ عمل پر غور کرنے کی جگہ دوسروں کو الزام تراشی کرتے ہیں. یوں اصلاح کا موقع نہیں ملتا. ایک غلطی کے بعد اگلی غلطی. ایک نقصان کے بعد دوسرا نقصان. نقصان در نقصان. ناکام آدمی کی انا بہت خطرناک ہوتی ہے. ناکامی کی بےعزتی سے بچنے کے لۓ وہ تاولیں پیش کرتا ہے جو کہ حقیقت نیہں صرف بہانے ہوتے ہیں. ناکامیاں دور کرنے کے جگہ پردہ ڈالا جاتا ہے. بات بڑھ جاۓ تو دوسروں سے لڑنے بھڑنے کے لۓ تیار رہتے ہیں.

دعا ہے الله تعالٰی ہم سب کو شکر گزار اور عاجز بناۓ.

اس خبر پر بحث کرنے کے لئے ابھی ہمارے پورٹل پر فری رجسٹر کریں۔

زمرے