fbpx

The Report Center- رپورٹ سنٹر

دو طرفہ مذاکرات سے بھارت پیچھے ہٹ رہا ہے۔ وزیر خارجہ

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ پاکستان بھارت سے دوطرفہ مذاکرات کے لئے مخلص ہے لیکن بھارت پیچھے ہٹ رہا ہے۔ سما جی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر شاہ محمود قریشی نے اپنی ٹوئٹس میں کہا ہے کہ گزشتہ 5 ماہ کے دوران پاکستان کی درخواست پر چین کی حمایت کے باعث اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ارکان کو دوسری مرتبہ مقبوضہ کشمیر کی صورت حال پر بریفنگ دی گئی ہے۔ اس کے علاوہ انہوں نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی و سلامتی کونسل کے صدور اور جنرل سیکریٹری سے ملاقاتیں کی ہیں، جن میں انہوں نے 5 اگست 2019 کے بعد بے گناہ اور نہتے کشمیریوں پر بھارت کی ریاستی دہشت گردی سے آگاہ کیا۔وزیر خارجہ نے کہا کہ مسئلہ کشمیر بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ تنازع ہے جو 7 دہائیوں سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ایجنڈے میں شامل ہے۔ عالمی فورمز میں ایک بار پھر عالمی فورمز کی قراردادوں اور کشمیری عوام کی امنگوں کے مطابق جلد از جلد اس بین الاقوامی تنازع کے حل کرنے کی اشد ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔دوسری جانب شاہ محمود قریشی نے میڈیا سے گفتگو کے دوران کہا کہ 5 اگست 2019 سے 80 لاکھ کشمیریوں کو مسلسل کرفیو کا سامنا ہے، مقبوضہ کشمیر کی صورتحال بھارت کا اندرونی معاملہ نہیں، مسئلہ کشمیر سلامتی کونسل کے ایجنڈے پر موجود ہے، کئی ملکوں کو مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر تشویش ہے اور کئی ملک دوطرفہ بات چیت پر زور دے رہے ہیں۔ پاکستان بھارت سے دوطرفہ مذاکرات کے لیے مخلص ہے لیکن بھارت پیچھے ہٹ رہا ہے۔

اس خبر پر بحث کرنے کے لئے ابھی ہمارے پورٹل پر فری رجسٹر کریں۔

تصنيفات
Close Menu