کیا انسان بھی دوسری چیزوں کی طرح جعلی ہو سکتے ہیں حیران کن خبر

آج ہم آپ کو دنیا کے ایک ایسے گاوں سے متعارف کروانے جا رہے ہیں جہاں انسانوں اور عمارات سے لے کر ہر چیز جعلی ہے اور وہاں صرف روبوٹ گاڑیاں چلاتے ہیں۔یہ گاوں امریکی ریاست مشی گن کے شہر این آربر میں واقع ہے جو یونیورسٹی آف مشی گن کی طرف سے بنایا گیا ہے اور اس کا نام ایم سٹی(Mcity)ہے۔ اس شہر کے قیام کا مقصد بغیر ڈرائیور کے گاڑیوں کے آزمائشی تجربات کرنا ہے۔ یہاں کسی گاں کی سڑکوں جیسی ٹوٹی پھوٹی کچی سڑکیں بھی موجود ہیں اور کسی بڑے شہر کے جیسے خوبصورت روڈز بھی۔ اس شہر میں موجود انسان دراصل مکینیکل مجسمے ہیں جو سڑک کنارے نصب ہیں اور لائٹس کی بدولت ایسا لگتا ہے کہ وہ سڑک کنارے پیدل چل رہے ہیں۔یہاں کی عمارتیں بھی مصنوعی ہیں۔ایم سٹی میں سیلف ڈرائیونگ (بغیر ڈرائیور چلنے والی )کاروں کے تجربے کیے جاتے ہیں جنہیں روبوٹ چلاتے ہیں، اس طرح ان کاروں کی طاقت، کارکردگی ودیگر عوام کا جائزہ لیا جاتا ہے۔ اس مقصد کے لیے ہر طرح کی سڑکیں اور ٹریفک کے سگنلز بنائے گئے ہیں جن پرروبوٹس گاڑیاں چلاتے ہیں اور اس دوران ٹریفک قوانین کی بھی پاسداری کرتے ہیں۔ ایم سٹی کا رقبہ 32ایکڑ ہے اور اس پر 65لاکھ ڈالر(تقریبا65کروڑ روپے) لاگت آئی ہے۔ اس میں 40عمارتیں اس طرح بنائی گئی ہیں کہ ان کے صرف فرنٹ موجود ہیں، یعنی عمارتوں کا صرف سامنے کا حصہ بنایا گیا ہے۔ اس میں ٹریفک سرکل، ایک پل، زیرزمین سڑک، کنکریٹ کی سڑکیں، سڑکوں پر بیریئرز اور سیلف ڈرائیونگ کاروں کی آزمائش کے لیے مطلوب تمام لوازمات موجود ہیں۔