امریکہ ورکرز ویزہ پابندی میں توسیع

صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے فیصلہ کیا ہے کہ دنیا کے مختلف حصوں سے امریکہ آنے والے ورکرز پر جاری پابندی اس سال کے آخر تک بڑھادی جائے گی‘امریکی حکام کے مطابق اس اقدام کے نتیجے میں کرونا وائرس کے باعث بیروزگار ہونے والے امریکی شہریوں کے لیے پانچ لاکھ 25 ہزار ملازمتوں کے مواقع دستیاب ہوں گی.تفصیلات کے مطابق صدر ٹرمپ نے کرونا بحران کے پیش نظر بیرون ملک سے آنے والے ورکرز پر پابندی کا حکم اس سال اپریل میں جاری کیا تھا آج اس پابندی کے دو ماہ پورے ہونے پر اس میں دو ماہ کی توسیع کی جا رہی ہی.ان پابندیوں کا اطلاق ٹیکنالوجی کے ماہر ورکرز کے لئے ایچ ون بی ویزہ پر انے والے افراد پر بھی ہو گا امریکی ٹیکنالوجی کمپنیاں ہر سال بھارت اور چین سمیت دنیا کے مختلف حصوں سے ٹیکنالوجی کے ہزاروں ماہرین کو امریکہ لاتی ہیں.اس کے علاوہ ایچ ٹو بی ویزہ پر بھی پابندی ہو گی، جو کہ زراعت کے علاوہ مختلف موسموں میں بیرون ممالک سے انے والیکارکنان کو امریکہ آنے کی اجازت دیتا ہے‘اسی طرح طالب علموں کے تبادلے کے لیے جے ون ویزہ اور بین الاقوامی کارپوریشن کے دفتروں میں کام کرنے والے مینیجرز کے لئے ایل ویزہ پر بھی پابندی ہو گی‘البتہ فوڈ پراسیسنگ سے وابستہ کارکنان، صحت کے شعبے سے وابستہ افراد، جو کرونا وائرس کے خلاف جنگ میں مدد کر رہے ہیں، وہ اس پابندی سے مثتثنی ہوں گی.

اس خبر پر بحث کرنے کے لئے ابھی ہمارے پورٹل پر فری رجسٹر کریں۔

زمرے