بھارت چین کشیدگی، مزید دو بھارتی فوجی مارے گئے

بھارت ، چین کشیدگی شدت اختیار کرگئی، لداخ سیکٹر میں ایک بار پھر جھڑپ ،چینی افواج نے مزید دو در انداز بھارتی فوجی ماردیئے جبکہ 3 اور ٹیکنیکل پوزیشنز کا کنٹرول حاصل کرلیا ۔ نجی ٹی وی کے مطابق لداخ میں بھارت کو مسلسل ہزیمت کا سامناہے جہاں چین نے ایل اے سی پر مزید تین ٹیکنیکل پوزیشنز کاکنٹرول حاصل کرلیا جس میں دولت بیگ اولڈی، گلوان ویلی کے اہم حصے شامل ہیں جبکہ بھارتی فوج پینگانگ میں فنگرٹو تک محدود ہو کر رہ گئی ہے۔ دوسری جانب چین کا کہنا ہے کہ وہ 20 مارشل آرٹس ٹرینرز کو اپنی افواج کی تربیت کے لیے تبت بھیج رہا ہے۔ چین کی جانب سے اس کی سرکاری وجہ نہیں بتائی گئی تاہم چین کے بروقت فیصلوں نے مودی سرکارکو بوکھلاہٹ کا شکار کررکھا ہے۔ ادھر بھارتی ٹی وی کی رپورٹ میں کہا گیا ہے گلوان دریا سیکٹر میں 9کلو میٹر کے علاقے میں چینی فوج نے 16کیمپ قائم کر لئے ہیں جبکہ بھارت چینی سرحد پر اپنی فوج میں مسلسل اضافہ کر رہا ہے۔بھارتی دفتر خارجہ کے ترجمان نے الزام عائد کیا ہے کہ چین نے ہمالیہ میں متنازع سرحد سے متعلق دوطرفہ معاہدوں کی خلاف ورزی کی ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ چین نے علاقے میں خود کو محدود کرنے کی کوشش نہیں کی ہے بلکہ وہ بڑے پیمانے پر فوج میں اضافہ کررہا ہے۔سیٹلایٹ کے ذریعہ نئی تصاویر میں اس بات کی نشاندہی ہورہی ہے کہ چین نے گلوان علاقے میں اپنی فوجی پوزیشن مستحکم کرلی ہے۔ چین کی زمینی پوزیشن میں صاف طور پر تبدیلی دکھائی دے رہی ہے۔ نئی تصاویر میں گلوان دریا میں بھارت کی جانب سے نقصان زدہ پختہ دیوار کو دیکھا جاسکتا ہے، لیکن کوئی نیا بھارتی کیمپ موجود نہیں دکھائی دے رہا ہے۔نئی تصاویر میں گلوان دریا میں 9کلو میٹر کے علاقے میں کم سے کم 16فوجی کیمپ دکھائی دے رہے ہیں جن پر کالے رنگ کے ترپال ہیں۔اس کے علاوہ سینکڑوں گاڑیاں اور بلڈوزر بھی دکھائی دے رہے ہیں۔ علاوہ ازیں بھارتی میڈیا رپورٹو ں کے مطابق لداخ میں حقیقی کنٹرول لائین پر مزید دو بھارتی فوجی لقمہ اجل بن گئے ہیں لیکن وزارت دفاع نے ان کی ہلاکت کی وجوہات کے بارے میں کچھ کہنے سے انکار کردیا ۔

اس خبر پر بحث کرنے کے لئے ابھی ہمارے پورٹل پر فری رجسٹر کریں۔

جواب دیں

زمرے