نارووال روڈ کی عدم تعمیر کیخلاف درخواست پر وفاقی و صوبائی حکومت سمیت دیگر فریقین کو نوٹس جاری

لاہور (ویب ڈیسک) لاہور ہائیکورٹ نے لاہور نارووال روڈ کی عدم تعمیر کیخلاف درخواست پر وفاقی و صوبائی حکومت سمیت دیگر فریقین کو نوٹس جاری کر دیئے۔ آئندہ سماعت پر وفاقی و صوبائی حکومت کو رپورٹ اور شق وار جواب جمع کرانے کا حکم دے دیا۔ چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے شکر گڑھ بار ایسوسی ایشن کی درخواست پر سماعت کی۔ درخواست گزار کی طرف سے صدر لاہور ہائیکورٹ بار طاہر نصراللہ وڑائچ پیش ہوئے۔ انہوں نے عدالت کو بتایا کہ عرصہ دراز سے لاہور نارووال روڈ کی توسیع کا پراجیکٹ جس کا افتتاح مسلم لیگ (ن) کے دور میں کیا گیا زیر التواء ہے۔ روڈ کی تعمیر کیلئے فنڈز جاری کرکے منصوبہ مکمل کرنے کا حکم دیا جائے۔ فاضل عدالت نے ریمارکس دیئے کہ حکومت نے کرتار پور بہت بڑا پراجیکٹ بنایا۔ آئین کے تحت اقلیتوں کو تحفظ اور سہولت دینا بہت اچھی بات تھی۔ مذہبی ٹورزم میں دنیا بھر سے لوگ آتے ہیں۔ لاہور سے کرتار پور تک جاتے ہوئے کبھی حکومت نے سوچا ہے کہ اس سڑک کیا حالت ہے؟۔ حکومت ساری دنیا سے آنے والوں کو کیا میسج دے رہی۔ کرتار پور جانے والوں کو سکیورٹی سکواڈ دیا جائے تو اس سے اچھا میسج نہیں جاتا۔ سیاح اپنے چلنے پھرنے کی آزادی نہیں محسوس کرے گا تو کیسے سرمایہ کاری آئے گی؟ اربوں روپے وہاں پر لگائے مگر کروڑوں روپے والے پراجیکٹس کو نظر انداز کر دیا گیا۔ روڈ کیلئے کیوں فنڈز جاری نہیں کئے گئے۔ سیکرٹری لاہور ہائیکورٹ بار ہارون دوگل نے روڈ پر نوٹس لینے کی استدعا کی۔

اس خبر پر بحث کرنے کے لئے ابھی ہمارے پورٹل پر فری رجسٹر کریں۔

جواب دیں

زمرے