وزیراعظم عمران خان کا مالدیپ کے صدر سے ٹیلی فونک رابطہ

وزیراعظم عمران خان نے مالدیپ کے صدر ابراہیم محمد صالح سے ٹیلی فون پر گفتگو کی ہے۔ پیر کو دونوں رہنمائوں نے کووڈ۔19 کی صورتحال کے باعث درپیش مسائل پر تفصیل سے تبادلہ خیال کیا۔ وزیراعظم آفس کے میڈیا ونگ کی طرف سے جاری بیان کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے مالدیپ کی جانب سے کورونا وائرس کی وبا کے پھیلائو کو روکنے اور معیشت سمیت سیاحت کے شعبہ کی بحالی کیلئے کی جانے والی کاوشوں کی تعریف کی۔ وزیراعظم عمران خان نے مالدیپ کے صدر کو پاکستان میں تازہ ترین صورتحال کے بارے میں بریف کیا اور کووڈ۔19 پر قابو پانے کے حوالہ سے حکومت پاکستان کی کاوشوں سے آگاہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں حکومت نے انسانی جانوں کے تحفظ، کاروبار اور آمدنی کے ذرائع کو محفوظ بنانے اور معیشت کی بحالی پر خصوصی توجہ دی ہے۔ وزیراعظم نے مزید کہا کہ سمارٹ لاک ڈائون کی حکمت عملی کامیاب رہی ہے اور معیشت کے بڑے شعبے بتدریج کھولے جا رہے ہیں۔ وزیراعظم عمران خان نے گلوبل انیشیٹیو آن ڈیٹ ریلیف کے حوالہ سے مالدیپ کے صدر کو آگاہ کیا جو ترقی پذیر ممالک میں کورونا وبا کے شدید سماجی و معاشی اثرات کو کم کرنے کیلئے شروع کیا گیا ہے۔ وزیراعظم نے اس امر پر زور دیا کہ ترقی پذیر ممالک کا مالیاتی وسائل اور صحت کے شعبہ میں بنیادی ڈھانچہ کی سہولیات میں کمی کے باعث کورونا وبا سے خصوصاً زیادہ متاثر ہوئے ہیں اس لئے ترقی پذیر ممالک میں خصوصی اقدامات کی ضرورت ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے جنوبی ایشیاء میں امن اور سلامتی کی صورتحال کے تناظر میں کہا کہ جنوبی ایشیائی ممالک کو اپنی حقیقی معاشی استعداد کا احساس کرنا چاہئے اور ان کو خطہ میں امن اور باہمی تعاون کے فروغ کیلئے اقدامات کرنے چاہئیں۔ وزیراعظم نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ پاکستان مالدیپ کے ساتھ مل کر باہمی تعاون، دوطرفہ ترقی اور خطہ کی ترقی کے حوالہ سے کام کرنا چاہتا ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے مالدیپ کے صدر ابراہیم صالح کو دورہ پاکستان کی دعوت کا اعادہ کیا اور کہا کہ وہ جلد از جلد مناسب وقت میں ان کے استقبال کے خواہشمند ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان مالدیپ کے ساتھ اپنے باہمی تعلقات کو بڑی اہمیت دیتا ہے اور سارک کا رکن ملک ہونے کی حیثیت سے پاکستان مالدیپ کے ساتھ تمام شعبوں میں دوطرفہ تعاون اور تعلقات کو مزید مستحکم کرنے کیلئے پرعزم ہے