بھارت کو جنوبی افریقہ کی کرکٹ ٹیم کا پاکستان جانا ہضم نہ ہوا پروٹیز ٹیم کے بھارتی اینالسٹ کوپاکستانی ویزا دینے سے انکار

ویزا مسائل کے باعث جنوبی افریقی کرکٹ ٹیم اپنے دیرینہ اینالسٹ کو پاکستان ساتھ نہ لے جاسکی، پراسنا اگورم بنگلور میں گھر بیٹھ کر ہی لیپ ٹاپ پر ٹیم کی رہنمائی کریں گے۔ تفصیلات کے مطابق جنوبی افریقی کرکٹ ٹیم 26 جنوری کو کراچی میں پاکستان کیخلافپہلا ٹیسٹ کھیلے گی لیکن پروٹیز ٹیم کو بھارت تعلق رکھنے والے پراسنا اگورم کی خدمات میسر نہیں ہوں گی، وہ 11 سال سے پرفارمنس اینالسٹ کے طور پر کام کررہے ہیں، پراسنا ویزا مسائل کی وجہ سے پاکستان نہیں جا سکے ہیں اور اب بنگلور میں اپنے گھر سے لیپ ٹاپ پر پروٹیز ٹیم کی رہنمائی کریں گے۔بھارتی پاسپورٹ کی وجہ سے جنوبی افریقی ٹیم مینجمنٹ نے انھیں بتادیا تھا کہ بھرپور کوشش کے باوجود سکیورٹی پروٹوکول کی وجہ سے وہ پاکستان کا سفر نہیں کرسکتے ہیں جس کے باعث وہ اب ٹیم جرسی اور آفیشل ٹریننگ جوتے پہن کر اپنے گھر پر 2 لیپ ٹاپس کے ساتھ کام کریں گے، لوڈشیڈنگ کے خطرے کی وجہ سے پراسنا یو پی ایس کا بھی انتظام کرچکے ہیں، پراسنا نے کہا کہ گھر سے اپنی ٹیم کی مدد کی پوری کوشش کروںگا مگر ڈریسنگ روم میں بیٹھ کر کام کرنے کی اہمیت سے انکار کرنا بھی ممکن نہیں ہے، اس وقت بھی میں مختلف وقفوں کے دوران صورتحال کے بارے میں کوچز کو جائزہ رپورٹس دیتا تھا جس کے بلبوتے پر وہ حکمت عملی بناتے تھے، اب بائیو سیکیور ببل میں چونکہ ڈریسنگ روم میں باہر سے رابطے کی اجازت نہیں اور ٹیم منیجر کے پاس موبائل بھی صرف لاجسٹک مسائل کے حل کے لے ہوتا ہے اس لیے میچ کے دوران کوچز سے رابطہ نہیں کرسکوں گا تاہم جب وہ دن کےاختتام پر ہوٹل واپس آئیں گے تو دن کے حوالے سے انھیں اور پلیئرز کو پرفارمنس کا تجزیہ دیکر بتائوں گا کہ انہوں نے کیا غلط کیا اور کیا ٹھیک کیا۔پراسنا اگورم نے کہا کہ میں پاکستان جانے کے حوالے سے پرجوش تھا مگر مجھے بتایا گیا کہ جس طرح زمبابوے کے بھارتی کوچ لال چند راجپوت نہیں جا سکے اور امپائر علیم ڈار بھارت نہیں آسکتے اسی طرح میں بھی پاکستان کا سفر نہیں کرسکتا۔