فضل الرحمن کو سیاسی میدان سے تکنیکی ناک آئوٹ کرنے کی کوششیں تیز،بے اثر کرنے کیلئے بڑا منصوبہ تیار

جمعیت علما اسلام کے سربراہ فضل الرحمن کو تکنیکی طور پر ناک آئوٹ کر نے کی کوششیں شروع کردی گئی ہیں ۔ ان کے سیاسی قد کاٹھ کو گھٹانے کے لئے مخالفین کوشاں ہیں ۔روزنامہ جنگ میں طارق بٹ کی شائع خبر کے مطابق جے یو آئی(ف)کے چار سابق سینئر رہنما جنہیں گزشتہ دنوں پارٹی سے نکال دیا گیا وہ کوشاں ہیں کہ فضل الرحمان کو بے اثر کردیا جائے ۔دیکھنا یہ ہو گا کہ اگر فضل الرحمن کے خلاف کوششیں کامیاب ہو جا تی ہیں تو آیا اپوزیشن اتحاد پی ڈی ایم پر بھی اس کے اثرات مرتب ہوں جس کے وہ سربراہ ہیں۔ اس کا بظاہر جواب نفی میں ہوگا کیونکہ جب جنرل ضیا الحق کے دور میں مولانا سمیع الحق نے علیحدہ ہو کر اپنا دھڑا بنالیا تھا تو اس وقت فضل الرحمان کی حیثیت میں کوئی فرق نہیں آیا تھا ۔جے یو آئی سے بے دخل کئے جا نے والے رہنمائوں حافظ حسین احمد ، محمد خان شیرانی ،نصیب گل اور شجاع الملک الیکشن کمیشن میں پارٹی رجسٹریشن میں نام تبدیل کر نے کے لئے فضل الرحمان کو نوٹس بھیجنے پر غور کر رہے ہیں ۔اس گروپ کا موقف ہے کہ 2013 میں ان کے ایک ساتھی ڈاکٹر عبدالعزیز نے جے یو آئی کے سربراہ کو بتایا تھا کہ جمعیت علما اسلام پاکستان کے نام سے پاکستان ہٹا کر اس کی جگہ فضل الرحمان لگا دیا گیا ہے ۔