ساڑھے تین گھنٹے تک یرغمال بنایا گیا وکلاء نے میری ذات پر نہیں عدلیہ اور ادارے پر حملہ کیا جسٹس اطہر من اللہ

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ کا کہنا ہے کہ وکلاء نے میری ذات پر نہیں عدلیہ اور ادارے پر حملہ کیا۔تفصیلات کے مطابق وکلا ء کے اسلام آباد ہائیکورٹ پر دھاوا بولنے کے تیسرے روز آج عدالتیں کھل گئی ہیں تاہم عدالت کے اندر اور باہر پولیس رینجرز کی بھاری نفری تعینات ہے۔چیف جسٹس ہائیکورٹ اطہر من اللہ نے ایک کی سماعت کے بعد واقعے سے متعلق ریمارکس دیتے ہوئے اسلام آباد ہائیکورٹ پر حملے کو پانچ فیصد وکلا کی کارروائی قرار دیا۔انہوں نے کہا کہ پانچ فیصد نے یہ سب کچھ کیا 95 فیصد وکلا تو پروفیشنل ہیں۔جو کچھ دو روز قبل ہوا اس پر انتہائی شرمندہ ہوں۔انہوں نے کہا مجھے ساڑھے تین گھنٹے تک یرغمال بنائے رکھا۔میں ایکشن لے سکتا تھا لیکن میں نے اکیلے محصور رہنے کا فیصلہ کیا اور ہائیکورٹ سے جانے کی بجائے ساڑھے تین گھنٹے یرغمال رہ کر سامنا کیا۔میں ایکشن لیتا تو کہتے اپنے ہی ایڈوکیٹس کے خلاف کارروائی کروائی۔اس معاملے میں اتھارٹی بار کونسل ہے انہیں اس معاملے کو دیکھنا چاہئیے۔وکلاء نے اسلام آباد ہائیکورٹ پر حملہ کر کے سب کو راستہ دکھایا ہے کہ یہ طریقہ ہے۔ایسا واقعہ دوبارہ تب نہیں ہو گا جب اس واقعے کے ذمہ داران کو مثال بنایا جائے۔یہ عدالت بار کونسل سے امید رکھتی ہے کہ وہ واقعہ میں ملوث افراد کے خلاف کارروائی کرے۔قانون اپنا راستہ خود بنائے گا۔اچیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ یہ حملہ میری ذات پر نہیں عدلیہ اور ادارے پر حملہ ہے

This Post Has One Comment

  1. Naseer Ahmad

    Who will take action against these layers. If this action will not stopped now it will never stop.

Comments are closed.